کیا حکومتی قانونی ٹیم ناکام ہوگئی، کیا ان کیخلاف قانونی کاروائی کی جائے گی، وزیراعظم نے اہم اعلان کردیا

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ پیسا بچانے والے مافیا کو آئندہ بھی مایوسی ہوگی، عدالتی فیصلہ قانونی ٹیم کی کامیابی ہے، پی ٹی آئی جمہوری اقدار پر یقین رکھتی ہے، جمہوریت میں اختلاف رائے بھی ہوتا ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت حکومتی ترجمانوں کا اجلاس ہوا۔اجلاس میں قانونی ٹیم نے ترجمانوں کوعدالتی فیصلے اور کارروائی پربریفنگ دی گئی۔ حکومتی ترجمانوں کے اجلاس میں عدلیہ کے کردار کی تعریف کی گئی۔ اجلاس میں ترجمانوں کو فارن فنڈنگ کیس پر بھی بریفنگ دی گئی۔ ذرائع نے بتایا کہ اجلاس میں وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ عدالت نے آئندہ کے

لیے بھی رہنمائی کی۔ پہلے اس طرح کے سوالات کبھی سامنے نہیں آئے۔عدالت اور قانون کی رہنمائی میں آئندہ کیلئے قانون سازی ہوگی۔ قانونی ٹیم نے عدالت عظمٰی کو مطمئن کرنے میں اہم کرارادا کیا۔ عدالتی فیصلہ قانونی ٹیم کی کامیابی ہے۔ انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کے فیصلے سے مافیا کو مایوسی ہوئی۔ اپنا پیسا بچانے والے اس مافیا کو آئندہ بھی مایوسی ہوگی۔ ملکی اداروں میں تصادم چاہنے والوں کوشکست ہوئی۔ وزیراعظم نے کہا کہ پی ٹی آئی جمہوری اقدار پر یقین رکھتی ہے۔جمہوریت میں اختلاف ہوتا ہے۔ مزید برآں وزیراعظم عمران خان نے پی آئی اے میں جاری اصلاحات کے عمل پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ قومی ایئر لائن کی بحالی اور اسے منافع بخش ادارہ بنانا حکومتی ترجیحات میں شامل ہے۔ انہوں نے ہوا بازی ڈویژن سے متعلق معاملات پر اجلاس کی صدارت کی۔ اجلاس میں وزیر ہوا بازی غلام سرور، وزیرِ بحری امور سیّد علی حیدر زیدی، وزیرِ منصوبہ بندی اسد عمر، مشیر خزانہ ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ، معاون خصوصی ندیم بابر، معاون خصوصی سیّد ذوالفقار عباس بخاری، چیئرمین سرمایہ کاری بورڈ سیّد زبیر گیلانی، سیکرٹری ہوا بازی شاہ رخ نصرت، چیئرمین پی آئی اے ایئر مارشل ارشد محمود ملک و دیگر سینئر افسران نے شرکت کی۔اجلاس میں ہوا بازی ڈویژن سے متعلق معاملات خصوصاً پاکستان انٹرنیشنل ایئر لائنز میں حالیہ اصلاحات کے ثمرات اور ملکی ہوائی اڈوں کے بہتر انتظام کے حوالے سے بات چیت کی گئی۔ چیئرمین پی آئی اے ایئر مارشل ارشد محمود نے اجلاس کو بتایا کہ قومی ایئرلائن میں اصلاحات کے خاطر خواہ ثمرات

سامنے آنا شروع ہو گئے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ جہاں ایک طرف قومی ایئر لائنز کی پروازوں میں 47 پروازوں کا اضافہ کیا گیا ہے اور 2 نئے جہاز پی آئی اے فلیٹ میں شامل کئے گئے ہیں وہاں پی آئی اے کے ماہانہ خسارے میں خاطر خواہ کمی آئی ہے۔انہوں نے بتایا کہ اس کارکردگی میں مزید بہتری لانے اور ادارے کو منافع بخش ادارہ بنانے کیلئے پی آئی اے کی موجودہ انتظامیہ شب و روز مصروفِ عمل ہے۔ وزیرِاعظم نے پی آئی اے میں جاری اصلاحات کے عمل پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ قومی ایئر لائن کی بحالی اور اسے منافع بخش ادارہ بنانا حکومت کی ترجیحات میں شامل ہے۔ اجلاس میں ملکی ہوائی اڈوں کے بہتر انتظام اور مسافروں کو بین الاقوامی معیار کی سہولیات کی فراہمی کیلئے کئے جانے والے فیصلوں پر عملدرآمد میں پیشرفت اور مستقبل کے لائحہ عمل کا بھی جائزہ لیا گیا۔